Advertisements
Free Business Listing
اگر بارڈر پر صورتحال اتنی خراب ہے توپھر کرتارپور بارڈر کیوں کھل رہا ہے ؟ صحافی کے سوال پر مولانا فضل الرحمن کا دو ٹوک جواب۔ 104

اگر بارڈر پر صورتحال اتنی خراب ہے توپھر کرتارپور بارڈر کیوں کھل رہا ہے ؟ صحافی کے سوال پر مولانا فضل الرحمن کا دو ٹوک جواب۔

اسلام آباد ۔

26 اکتوبر جمعیت علماء اسلام کے سربراہ مولانا فضل الرحمن نے حکومت کے خلاف آزادی مارچ کا اعلان کر رکھا ہے جسکا آگاز 27 اکتوبر سے ہو گا اور قافلے پورے پاکستان سے وفاقی دارلحکومت  اسلام آباد  داخل ہوں گے آزادی مارچ کے حوالے سے مولانا فضل الرحمن کی  پر ہجوم پریس کانفرنس کے  دوران  صحافی نے جمعیت علماء اسلام کے سربراہ فضل الرحمن سے سوال کیا کے بارڈر کی صورتحال اتنی خراب ہے ایسے حالات میں آپ مارچ کیوں کر رہے ہیں ؟ مولانا فضل الرحمن نے دو ٹوک جواب دیتے ہوئے کہا کے اگر بارڈر پر اتنے حالات خراب ہیں تو کرتاپور بارڈر کیوں کھل رہا ہے ۔

یہ کیسا ہندوستان ہے کے وہاں سے اتنی ٹنشن بڑھ رہی ہے ہم مارچ نہ کریں لیکن دوسری جانب انہی کے ساتھ مل کر پورا کوریڈور کھولا جا رہا ہے  ایسی دوغلی پالیساں اور دھوکہ کسی اور کے ساتھ کریں ہمارے ساتھ نہ کریں ۔ مولانا فضل الرحمن  کا دعوی ہے کے 15 لاکھ لوگ لے کر اسلام آباد داخل ہوں گا مولانا صاحب کی مہم پورے پاکستان میں زور و شور سے جاری ہے مولانا فضل الرحمن نے حکومت پاکستان کے لئے خاصی مشکلات پیدا کر دی ہیں یاد رہے آزادی مارچ کا آغاز 27 اکتوبر سے ہو گا جو پورے پاکستان سے ہوتا ہوا اسلام آباد داخل ہو گا ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں