Advertisements
فروغ نسیم  نے سرعام سزائے موت کی مخالفت کر دی۔ 98

فروغ نسیم  نے سرعام سزائے موت کی مخالفت کر دی۔

اسلام آباد : جموں کشمیر نیوز ٹاکس ۔

8 فروری وزارت قانون فروغ نسیم نے سرعام سزائے موت کی مخالفت کرتے ہوئے غیر آئینی قرار دے دیا ۔

فروغ نسیم نے اپنے ایک بیان میں کہا کے سرعام پھانسی اسلامی تعلیمات اور آئین پاکستان کے منافی ہے ۔ فروغ نسیم کا کہنا ہے کے اس سے پہلے سپریم کورٹ آف پاکستان 1994 میں سرعام پھانسی کی سزا کو غیر آئینی قرار دے چکی ہے ۔

سپریم کورٹ آف پاکستان پہلے سے ہی کہہ چکی ہے کے سر عام پھانسی آئین کے ساتھ ساتھ شریعی قوانین کی بھی خلاف ورزی ہے ۔

وزارت قانون آئین اور قانون کے خلاف کسی بھی بننے والے قانون کی حمایت نہیں کر سکتی ہم اس کی ؐؐمخالفت کریں گے ۔

واضح رہے 2 روز قبل بچوں سے زیادتی کرنے والے مجرموں کو پھانسی دینے کی قرارداد کثرت رائے سے منظور کی گئی تھی پیپلز پارٹی سمیت حکومتی وزرا فواد چوہدری اور شیری مزاری نے بھی اس قراداد کی بھرپور مخالفت کی تھی ۔ 

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں