Advertisements
دہلی کے ایک ہی خاندان کے 26 افراد میں کرونا پازیٹیو۔ 253

بھارتی مقبوضہ کشمیر| ہمارے ساتھ جانوروں جیسا سلوک کیا جارہا ہے:اہلخانہ کورونا وائرس متاثرین

سری نگر 31 مارچ  (جے کے نیوز ٹاکس) مقبوضہ کشمیر میں ٹنگمرگ سے تعلق رکھنے والے کورونا وائرس کے مریض جن کا پیر کے روزسی ڈی ہسپتال سرینگر میں انتقال ہوگیا تھا، کے اہلخانہ نے بتایا کہ سرینگر کے سینے کے امراض کے اسپتال میں ان کے ساتھ جانوروں کی طرح سلوک کیا گیا۔

تفصیلات   کے مطابق انتقال کرنے والے مریض  کے بیٹے ریاض احمد صوفی نے میڈیا کو بتایا کہ سی ڈی اسپتال میں ان کے ساتھ جانوروں جیسا سلوک کیا گیا اور ڈاکٹروں اور پیرامیڈکل عملے نے انہیں نظرانداز کیا ۔ انہوں نے کہاکہ ان کے والد کو ایس ایم ایچ ایس اسپتال سے سی ڈی ہسپتال ریفر کیا گیا تھا۔

انہوں نے کہاکہ مریض کو دوائیوں کی فراہمی کے لئے ہمیں کسی بھی حفاظتی پوشاک کے بغیر کورونا وائرس کے وارڈ میں جانے کو کہا گیا ۔ انہوں نے کہا کہ ہم بغیر کسی حفاظتی پوشاک کے 5-6 بار وارڈ میں گئے۔ریاض احمد نے کہاکہ ان کے والد طبی لاپرواہی کی وجہ سے چل بسے کیونکہ اسپتال میں ان کے ساتھ اچھا سلوک نہیں کیا گیا ۔ مرحوم کے اہل خانہ کو بارہمولہ میں قرنطینہ میں رکھا گیا ہے جہاں ان کی رپورٹوں کا انتظار ہے۔سب ڈسٹرکٹ ہسپتال ٹنگمرگ کے ڈاکٹروں نے بتایا کہ اس شخص کی سفری تاریخ نہیں تھی لیکن وہ اس شخص سے رابطے میں تھا جو حال ہی میں بیرون ملک سے واپس آیا تھا۔
دریں اثنا ءسی ڈی ہسپتال میں مریضوں کے ایٹنڈنٹس نے شکایت کی ہے کہ اسپتال میں ان کے لئے سہولیات موجود نہیں ہیں ۔سی ڈی ہسپتال میں ایک مریض کے ایٹنڈنٹ محمد الطاف نے بتایا کہ کورونا وائرس کے لگ بھگ 12 مریض اسپتال میںموجود ہیں لیکن یہاں پر طبی عملے کو انفیکشن کا شدید خطرہ ہے کیونکہ انتظامیہ انہیں کوئی سہولیات فراہم کرنے میں ناکام رہی ہے۔انہوں نے کہا کہ اسپتال کے حکام مریض کے اہل خانہ کو رپورٹ کے بارے میںآگاہ نہیں کررہے ہیں۔انہوں نے کہاکہ عملے کا کوئی رکن اسپتال میں کوررونا وائرس کے وارڈ میں نہیں جا رہا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں