Advertisements
نام نہاد سیکولر ملک بھارت کشمیر میں دہشت گردی کا نیا سلسلہ شروع کر چکا۔ 138

بھارتی مقبوضہ کشمیر میں بھارت کے نافذ کردہ فوجی محاصرے اور لاک ڈاﺅن کے آٹھ ماہ مکمل

بھارتی فوجیوں نے 8 ماہ کے دوران 3 خواتین سمیت 87 کشمیریوں کو شہید کردیا

سرینگر05 اپریل(جے کے نیوز ٹاکس) بھارت کی طرف سے گزشتہ سال 5 اگست کو مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت کی منسوخی اور علاقے میں جاری فوجی محاصرے اور لاک ڈاو ¿ن کو آج آٹھ ماہ مکمل ہوگئے ۔

کشمیرمیڈیاسروس کے ریسرچ سیکشن کی طرف سے جاری کردہ ایک رپورٹ کے مطابق بھارتی فوجیوں نے 8 ماہ کے دوران 3 خواتین سمیت 87 کشمیریوں کو شہید کردیاہے۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ اس عرصے کے دوران مقبوضہ علاقے میں بھارتی فوج ، نیم فوجی دستوں اور پولیس اہلکاروں کے ذریعہ پر امن مظاہرین پر گولیوں ، چھروں اور آنسوں گیس کے گولوں کی فائرنگ سے کم سے کم 956 افراد شدید زخمی ہوگئے ۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ اس عرصے کے دوران کل جماعتی حریت کانفرنس کے چیئرمین سید علی گیلانی ، میر واعظ عمر فاروق ، ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن کے صدر میاں عبد القیوم ، ڈاکٹر حمید فیاض ، غلام محمد حبی ، محمد یاسین عطائی ، شوکت احمد بخشی ، نور محمد کلوال ، ایڈوکیٹ زاہد علی ، مولانا مشتاق ویری ، ظفر اکبر بٹ ، بشیر احمد قریشی ، سید امتیاز حیدر ، عبد الصمد انقلابی ، عبدالاحد پرہ ، ٹریڈ یونین کے رہنما محمد یٰسین خان اور انسانی حقوق کے کارکن محمد احسن اونتو سمیت ہزاروں حریت رہنماﺅں ،کارکنوں، سیاست دانوں اور سول سوسائٹی کے ارکان کو گھروں یا جیلوں میں نظربند کردیا گیا ہے ۔

رپور ٹ میں مزید کہاگیا کہ دہلی کی بدنام زمانہ تہاڑ جیل اور بھارت کی دیگر جیلوں میں غیر قانونی طور پر نظربند دیگر افراد میں سینئر حریت رہنما شبیر احمد شاہ ، محمد یاسین ملک ، مسرت عالم بٹ ، آسیہ اندرابی ، فہمیدہ صوفی ، ناہیدہ نسرین ، الطاف احمد شاہ ، نعیم احمد خان ، ایاز اکبر ،پیر سیف اللہ، راجہ معراج الدین کلوال ، فاروق احمد ڈار ، کشمیری تاجر ظہور وٹالی ، محمد اسلم وانی ، سید شاہد شاہ ، سید شکیل یوسف شاہ ، غلام محمد بٹ ، مولانا سرجان برکاتی ، قاضی یاسر احمد اور غلام احمد گلزار شامل ہیں۔رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ محاصروں اورتلاشی کی بڑھتی ہوئی کارروائیوں نے پہلے سے پریشان مقبوضہ علاقے کے لوگوں کی مشکلات میں اضافہ کردیا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں