Advertisements
تھوراڑ اور باغ میں پولیس گردی اور سیاسی رہنماؤں کی گرفتاریوں کی مذمت کرتے ہیں : سردار انور ایڈوکیٹ ۔ 61

گلگت کو صوبہ نہیں آٸین ساز اسمبلی دی جاٸے، آذادی پسندوں پر تشدد اور گرفتاریاں قابل مذمت۔ سردار انور ایڈووکیٹ

دوبئی (جے کے نیوز ٹاکس) جموں کشمیر لبریشن مرنٹ کے سیاسی شعبہ کے سابق سربراہ سردار انور ایڈوکیٹ نے کہا ھےکہ پاکستان کے زیر انتظآم کشمیر میں حکومت پاکستان کی طرف سے گلگت بلتستان کو صوبہ بنانے کے خلاف جموں کشمیر نشنل عوامی پارٹی اور جموں کشمیر نشنل سٹوڈنٹس فیڈریشن کے پر امن پر مارچ نام نہادآذادکشمیر کی کٹھ پتلی انتظامیہ کا لاٹھی چارج آنسو گیس کا استمعال قیادت اور کارکنوں کی گرفتاریاں بذدلانہ اور شرمناک عمل ھے بھارت پاکستان اور بین الاقوامی سامراج کی مشترکہ گٹھ جوڑ سے ریاست جموں کشمیر کو مستقل بنیادوں پر تقسیم کرنے کے منصوبے کے خلاف منقسم ریاست اور دنیا بھر میں بھر پور مزاحمتی تحریک چلاہی جاے گے. عوامی حقوق اور ریاست کی وحدت کے لیے. لاکھوں کی تعداد میں ریاستی باشندوں کو سیز فائر لائن کے خاتمے کے لیے آر پار سےنکلنا ھو گا.اور نام نہاد آذادکشمیر اور گلگت بلتستان کے باشندوں کو اپنے حق حکمرانی اور شناخت کے لیے مشترکہ طور پر اسلام آباد کی طرف مارچ کرنا ھو گا سفارتی سطع پر بھارت اور پاکستان کے غاصبانہ قبضے کے خلاف دنیا بھر میں بھارتی پاکستانی سفارت خانوں اور اقوام متحدہ کے دفاتر کے سامنے مشترکہ طور پر پر امن دھرنے دینے ھوں گے..مودی ..نیازی گٹھ جوڑ بھارت اور پاکستان کے آلہ کاروں اور سہولت کاروں کے خلاف تمام آذادی پسندوں کو اجتماعی فکروعمل کے فلسفے کو فروغ دینا ھو گا انہوں نے گرفتار قیادت اور کارکنوں کی غیر مشروط رہاہی کا مطالبہ کرتے ھوے کہا ھے کہ مسلہ کشمیر کے حل ھونے تک گلگت بلتستان کی عوام کو آہین ساز اسمبلی دی جاے اس سلسلے میں بہت جلد کرونا کے قواہد و ضوابط کو مدنظر رکھتے ھوے متحدہ عرب امارت (دوبئی ) میں ال پارٹیز کانفرنس کا انقعاد کیا جاے گا

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں